اسلامی تعاون تنظیم اجلاس میں مسئلہ کشمیر کواٹھایا جائے،چوہدری محمد یاسین


اسلام آباد:آزاد جموں کشمیر قانون ساز اسمبلی میں لیڈر آف دی اپوزیشن چوہدری محمد یاسین نے کہا ہے کہ اسلامی تعاون تنظیم کے نائیجر وزرائے خارجہ کے سنتالیسوں سہ روزہ اجلاس میں مسئلہ کشمیر کو پوری قوت سے اٹھایا جائے اور اسلامی ممالک کو بھارتی جارحیت اور مقبوضہ کشمیر میں ہونے والے مظالم سے آگاہ کیا جائے۔

مزید پڑھیں:ہندوستان نے لائن آف کنٹرول پر جارحیت نہ روکی تو اس کے ہولناک نتائج ہو سکتے ہیں، وزیر اعظم آزاد کشمیر

ان خیالات کا اظہار انہوں نے مختلف وفود سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہا کہ اسلامی تعاون تنظیم ایک اہم فورم ہے اور مسلمان ممالک کے وزرائے خارجہ کو اس موقع پر بھارت میں مسلمانوں پر ہونے والے مظالم سے مقبوضہ کشمیر میں ہونے والے ظلم و تشدد پر بریفنگ دی جانی چاہیے۔

اُنہوں نے کہا کہ پاکستان کے وزیرِ خارجہ اس موقع سے بھر پور فائدہ اٹھا سکتے ہیں انہوں نے کہا کہ شہید قائد ذوالفقار علی بھٹو سے محترمہ بینظیر بھٹو شہید تک اسلامی ممالک پاکستان کے ساتھ کھڑے تھے لیکن بعد میں حکومتوں کی کمزور سفارت کاری کی وجہ سے آہستہ آہستہ یہ حمایت کم ہوتی چلی گئی اور اب ترکی اور ملیشیا کے علاوہ کھل کر کوئی بھی ملک مسئلہ کشمیر کی اسطرح حمایت نہیں کر رہے جس طرح کی جانی چاہیے تھی۔

اُنہوں نے کہا کہ ایک وقت میں اسلامی تعاون تنظیم میں پاکستان کا کردار قائدانہ ہوتا تھا لیکن خارجہ پالیسی کی کمزوری کی وجہ سے یہ کردار کم ہوتا چلا گیا بد قسمتی سے طیب اردگان کے علاوہ مسلم دنیا میں کوئی بڑا لیڈر موجود نہیں جس طرح شہید ذوالفقار علی بھٹو اور شاہ فیصل شہید جیسے لیڈر تھے اُنہوں نے کہا ہے کہ بلاول بھٹو زرداری واحد لیڈر ہیں جو یہ خلا پر کر سکتے ہیں۔

چوہدری محمد یاسین نے مزید کہا ہے وفاقی حکومت اصل مسائل کی جانب توجہ دینے کی بجائے اپوزیشن کو دیوار کے ساتھ لگانے میں مصروف ہے ملتان جلسہ سے پہلے علی موسیٰ گیلانی کی گرفتاری حکومت کی بوکھلاہٹ کا کھلا ثبوت ہے اُنہوں نے کہا کہ حکومت جمہوری آزادیاں سلب کرنے پر اپنی توانائیاں لگا رہی ہیں اور ملک روز بروز خرابی کی جانب جا رہا ہے ملتان کا جلسہ تاریخ ساز ہوگا۔