بلوچستان حکومت کا وفاق طرزپر ہیلتھ کارڈ سکیم شروع کرنے کا اعلان


کوئٹہ:بلوچستان حکومت نے وفاق کی طرز پر ہیلتھ کارڈ سکیم شروع کرنے کا اعلان کر دیا جبکہ صوبائی اسمبلی کے اجلاس کے دوران صوبے میں گیس بحران پر بھی بحث کی گئی۔ بلوچستان اسمبلی کا اجلاس ڈپٹی سپیکر بابر موسیٰ خیل کی زیر صدارت ہوا۔

اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال نے کہا کہ بلوچستان انڈومنٹ فنڈ سے 1200 مریض مستفید ہو چکے ہیں اور اب وفاق کی طرز پر جلد ہیلتھ کارڈ اسکیم بھی شروع کی جا رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ صوبے میں کینسر ہسپتال کی تعمیر کا کام بھی تیزی سے جاری ہے جبکہ بچوں کے لیے کینسر چائلڈ ہسپتال کا قیام بھی جلد عمل میں لایا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ غریبوں کے لیے صحت کے مسائل سنگین ہوتے ہیں اس لیے آنے والے بجٹ میں عوامی انڈومنٹ فنڈ کی رقم کو دگنا کیا جائے گا۔دورانِ اجلاس حکومت اور اپوزیشن ارکین نے صوبے میں گیس کے بحران پر وفاق کو آڑے ہاتھوں لیا اور کہا کہ سردیوں کے آغاز کے ساتھ ہی صوبے میں گیس کا مسئلہ سر اٹھانے لگا۔ سوئی سدرن حکام سے مذاکرات کے باوجود مسئلہ حل نہیں ہوا لہذا شہر میں گیس پریشر کا مسئلہ حل نہیں کیا گیا تو ہم اسلام آباد جاکر احتجاج کرینگے،صوبے میں گیس پریشر کے مسئلے کو حل کرنے کے لیے وفاقی وزیر کو طلب کیا جائے۔

مزید پڑھیں: خیبر پختونخوا پہلا صوبہ ہے جہاں تمام خاندانوں کو صحت کارڈدیاجارہاہے،عمران خان

گیس کے بحران پر اسپیکر نے رولنگ دیتے ہوئے کہا کہ صوبائی حکومت وفاقی وزیر سمیت ایم ڈی سوئی سدرن گیس کمپنی کو خط لکھے اور مسئلہ ہنگامی بنیادوں پر حل کیا جائے جبکہ تاجر رہنما اللہ داد ترین کے قتل کے خلاف تحریک التوا 27 نومبر کے اجلاس میں بحث کے لیے منظور کر لی گئی۔