اب مقبوضہ کشمیر ہی نہیں، بھارت کے اندر کئی ریاستیں آزاد ہوں گی،یوسف نسیم


اسلام آباد: حریت کانفرنس کے سابق کنوینئر یوسف نسیم نے کہا ہے کہ مقبوضہ وادی اور بھارت کے اندر نچلی ذات کے ہندوؤں سمیت تمام اقلیتوں پر ظلم کے پہاڑ گرائے جا رہے ہیں میں وثوق سے کہتا ہوں اب مقبوضہ وادی کشمیرہی نہیں  بھارت کے اندر کئی ریاستیں آزاد ہوں گی.

سرکاری ٹی وی سے ٹیلی فونک گفتگو میں انہوں نے کہا کہ بھارت میں اب کسی اقلیت کا رہنا مشکل ہو گیا ہے مقبوضہ کشمیر میں پچھلے 72 سالوں میں بھارت نے کشمیریوں کو خریدنے سمیت ہر حربہ استعمال کرنے میں ناکامی کے بعد مقبوضہ کشمیر کی شناخت ختم کر کے اپنے  آئین میں اپنا حصہ قرار دینے کی جو ناکام کوشش کی ہے۔اس سے ہندوستان کی اندر کی پوزیشن خراب ہو گئی ہے

ان کا کہنا تھا کہ بھارت نے مقبوضہ کشمیر میں پچھلے 30 سال میں نصف فوج کشمیریوں کے خلاف جنگ کے طور پر استعمال کی وہاں ایک ہزار سے زائد بچے شہید ہوئے خواتین اور بزرگ شہید ہوئے حریت قیادت کے بڑے بڑے لوگوں کو شہید کیا گیا لیکن کشمیریوں نے اپنے پیدائشی حق کے  لیے کبھی سمجھوتے کا سوچا تک بھی نہیں۔

انہوں نے کہاکہ آج بھارت کے اندر جو کچھ ہو رہا ہے اس سے پتہ چلتا ہے کہ اس سے کشمیریوں کی تاریخ زیادہ مضبوط ہوئی ہے اور کشمیریوں کی ہمت اور حوصلے زیادہ  بلند ہوئے ہیں دنیا کی انسانی حقوق کی تنظیمیں دیکھ رہی ہیں جو کچھ بھارت کر رہا ہے میں وثوق سے کہتا ہوں اب صرف مقبوضہ کشمیر ہی نہیں بھارت کے اندر کئی اور ریاستیں آزاد ہونگی۔

یوسف نسیم کا کہنا تھا کہ اگر بھارت میں جمہوریت ہوتی تو دربار امرتسر پر حملہ نہ ہوتا سکھوں کا قتل عام نہ ہوتا مساجد پر حملے نہ ہوتے۔آج اقلیتوں اور نچلی ذات کے ہندوؤں کے ساتھ ظلم و زیادتی نہ ہوئی کشمیری طاقت ایمانی سے مقابلہ کررہے ہیں اور انشاء اﷲ بھارت کو شکست فاش ہوگی۔