گلگت میں دھاندلی ہوئی تو اسلام آباد میں دھرنا دینگے: بلاول کی دھمکی


سکردو:پاکستان پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے اعلان کیا ہے کہ اگر گلگت بلتستان کے انتخابات میں دھاندلی کی کوشش بھی کی گئی تو عوام کے ساتھ اسلام آباد میں دھرنا دیں گے، گلگت بلتستان کے عوام دھوکہ نہیں کھا سکتے، عوام کسی کٹھ پتلی یاسلیکٹڈ کا ساتھ نہیں دیں گے۔

اسکردو میں جلسہ سے خطاب میں بلاول کا کہنا تھا کہ یہ الیکشن اقتدار کا نہیں، آپ کے مستقبل کا الیکشن ہے ان کا کہنا تھا کہ ہم آپ کو یہاں دھاندلی کی اجازت نہیں دیں گے، اگر ووٹ چوری کرنے کی کوشش کی توگلگت کی عوام کے ساتھ اسلام آباد جائیں گے اور دھرنا دیں گے۔انہوں نے مزید کہا کہ نوجوان قیادت ہی نوجوانوں کے مسائل حل کرسکتی ہے، نوجوانوں کا سب سے بڑا مسئلہ بے روزگاری ہے اور اس کا حل صرف پیپلز پارٹی کے پاس ہے ۔

بلاول بھٹو زرداری کا کہنا  تھا کہ  ذوالفقار بھٹو نے گلگت بلتستان کے عوام کو آزاد کروایا، بینظیر بھٹو نے گلگت بلتستان کے حقوق کی بات کی، آصف زرداری نے گلگت بلتستان کو صوبے کا درجہ دیا، مہدی شاہ نے گلگت بلتستان کے 25 ہزار جوانوں کو روزگار دلوایا لیکن پیپلزپارٹی حکومت کے بعد ان نوجوانوں کا روزگار چھین لیا گیا، اب پیپلزپارٹی کی نئی نسل کی جدوجہد شروع ہوچکی ہے۔چیئرمین پیپلز پارٹی کا کہنا تھا کہ گلگت بلتستان کو بہادر اور عوامی نمائندہ چاہیے، انہیں ایسا نمائندہ منتخب کرنا ہے جو اسکردو کے مسائل حل کرسکے، پورے پاکستان میں تبدیلی کے نام پر تباہی شروع ہوگئی ہے، گلگت بلتستان کو اس تباہی سے بچائیں گے، گلگت بلتستان کے عوام دھوکہ نہیں کھا سکتے، عوام کسی کٹھ پتلی کا ساتھ نہیں دیں گے، کسی سلیکٹڈ کا ساتھ نہیں دیں گے، پورے پاکستان کے عوام حکومت کیخلاف احتجاج کررہے ہیں، تحریک انصاف منہ دکھانے کے قابل نہیں رہی ۔

بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا کہ سندھ میں مفت علاج کے لئے اسپتالوں کا جال بچھادیا ہے، گلگت بلتستان میں بھی دل کے مفت علاج کے لئے اسپتال بنانا چاہتے ہیں، ہم نے تھر جیسے ریگستان میں پاورپلانٹ کھڑا کیا، گلگت بلتستان میں بجلی بنانیکا منصوبہ لگا کر دکھائیں گے، گلگت بلتستان کے عوام کو میرا ساتھ دینا ہے، 15نومبر کو گلگت بلتستان کے عوام کے ساتھ جیت کا جشن مناوں گا۔ اسلام آباد کو پیغام بھجوانا ہے کہ گلگت بلتستان کے عوام بھٹو کے ساتھ ہے، ووٹ چوری کرنے کی کوشش کی گئی توعوام کے ساتھ اسلام آباد جائیں گے ، بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ اگر حکومت میں آئے تو سب سے پہلے ترجیح گلگت بلتستان میں نوجوانوں کو روزگار دلانا ہوگی۔

انہوں نے مقامی انتخابی امیدوار محمد علی شاہ کے حوالے سے کہا کہ آپ نے عوامی جماعت کے نمائندے کو منتخب کروانا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ ‘گلگت بلتستان میں پاکستان تحریک انصاف والے منہ دکھانے کے لائق نہیں ہیں، انہوں تو اب تک کوئی انتخابی امیدوار نہیں دیا’۔

انہوں نے حکومت پر کڑی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ‘دیگر صوبوں کے لوگوں کو جھوٹ کی بنیاد پر بیوقوف بنایا لیکن یہاں کے لوگ بیوقوف نہیں ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ سلیکٹڈ اور کٹھ پتلی جماعت نے ایک کٹھ پتلی جماعت کے ساتھ اتحاد کرلیا۔بلاول بھٹو نے کہا کہ جو سیاسی جماعت مزدوروں کے ساتھ ظلم کرے اور انہیں بے روز گار کرے، آپ ان کا ساتھ کیسے دے سکتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ تبدیلی کے نام پر تباہی ہوگئی ہے اور ہر علاقے سے تیر کو جتوا کر اسلام آباد کو پیغام دینا ہے کہ گلگت بلتستان کے عوام شہید بھٹو کے ساتھ ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ عوام کا جذبہ دیکھ کر یقین ہوگیا کہ جیت صرف تیر کی ہوگی۔