کوئٹہ جلسے سے بلاول،مینگل،شیرپاؤ، غفوری حیدری کا مکمل خطاب


کوئٹہ:پاکستان پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو نے کہا کہ کوئٹہ کے جلسے میں دکھا دیا کہ پی ڈی ایم ایک طرف ہے اور مخالف قوتیں دوسری طرف ہیں، پی پی پی جمہوریت کی بحالی سے پیچھے ہٹی تھی اور نہ ہم پی ڈی ایم سے پیچھے ہٹیں گے، بڑی مشکل سے اس کی بنیاد اے پی سی میں رکھی گئی، ہم آگے بڑھنے والے ہیں لیکن پیچھے ہٹنے والوں میں سے نہیں ہوں۔کوئٹہ میںپی ڈی ایم کے جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے بلاول بھٹو نے کہا کہ ملک کا سب سے بڑا صوبہ ہونے، گیس اور سونے کی دولت سے مالا مال ہونے کے باوجود قسمت میں بدحالی لکھی ہوئی۔ ان کا کہنا تھا کہ عوام عزت کے ساتھ زندگی گزارنا چاہتے ہیں، عوام غربت، آزادی، بولنے اور سانس لینے کی آزادی چاہتے ہیں، یہ کیسی آزادی ہے جہاں سیاست، صحافت، عدالت اور عوام آزاد نہیں ہیں۔انہوں نے کہا کہ آج ہم سب ایک اسٹیج پر ہیں اور اب باقیوں کو بھی عوام کے اسٹیج پر آنا پڑے گا ورنہ ان سب کو گھر جانا پڑے گا۔ان کا کہنا تھا کہ آمریت نے بلوچستان کو لاشیں دیں، مشرف نے اپنے شہریوں کو دوسروں کو بیچا، غداری کا سرٹیفکیٹ دینے والا اپنے شہریوں کو بیچ رہا تھا، اب مشرف بھگوڑا سرٹیفائیڈ غدار بن چکا ہے۔پرویز مشرف پر بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس نے اکبر بگٹی کو شہید کیا، بنظیر بھٹو کو شہید کیا لیکن آج تک اس سے کسی نے نہیں پوچھا۔ان کا کہنا تھا کہ ہم نے انصاف پر مبنی این ایف سی دے کر تمام صوبوں کو ان کا حق دیا، آغاز حقوق بلوچستان دیا جس میں آئینی حقوق تھے لیکن اس پر عمل نہیں کیا گیا، جس میں سیاسی قیدیوں کو رہا کرکے سیاسی مسئلے حل کرنے کا موقع ملا۔انہوں نے کہا کہ گوادر اور گلگت بلتستان کی سرحدوں کے بغیر سی پیک نہیں ہوسکتا، سی پیک گیم چینجر کے طور آیا ہے تو ہمیں گوادر اور گلگت بلتستان کے عوام کا شکریہ ادا کرنا چاہیے، کیونکہ یہاں کے عوام کو شکایت ہے کہ انہیں اس منصوبے سے فائدہ نہیں پہنچایا جا رہا ہے۔بلاول نے کہا کہ اگر سی پیک کو کامیاب بنانا ہے تو گوادر اور گلگت بلتستان کے عوام کو مواقع دینے ہوں گے، ہم نے تھر کول منصوبے میں 71 فیصد مقامی لوگ ہیں، 20 فیصد لوگ دیگر صوبوں کے لوگ جبکہ 9 فیصد دیگر لوگوں اور چند غیرملکیوں کو روزگار دیا گیا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ یہی ماڈل ہے جو سی پیک مقامی افراد سے جڑ جاتا ہے، اگر اس پر عمل کیا جاتا ہے تو سی پیک کامیاب ہوگا اور ترقی بھی ہوگی ورنہ خطرہ بھی ہوسکتا ہے، عمران خان سی پیک کو ناکام کرنے کی کوشش کر رہا ہے، بلوچستان کے جزائر پر قبضہ کرنے کی کوشش کرتا ہے۔انہوں نے کہا کہ عمران خان نہ صرف سی پیک کو ناکام بنانا چاہتا ہے بلکہ پاکستان کی معیشت کو بھی تباہ کر رہا ہے۔

بلوچستان پہلے کی طرح اب بھی جاگ رہا ہے، اخترمینگل

بلوچستان نیشنل پارٹی (مینگل)کے سربراہ سردار اختر جان مینگل نے کہا کہ آج ہم ان قوتوں کو پیغام دینا چاہتے کہ بلوچستان پہلے کی طرح اب بھی جاگ رہا ہے اور جب بلوچستان جاگتا ہے تو ان کی نیندیں حرام ہوجاتی ہیں۔کوئٹہ میںپی ڈی ایم کے جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے سردار اختر مینگل نے کہا کہ بلوچستان کے عوام نے ہمیشہ جمہوریت کا علم بلند رکھا ہے لیکن یہ اور بات ہے جمہوری ادوار میں ہمیں وہ حصہ نہیں ملا مگر جب گلستان کو لہو کی ضرورت پڑتی تو گردن ہماری کٹی۔ان کا کہنا تھا کہ کوئٹہ کو انگریزوں نے منی لندن کہا تھا اور یہاں ہر رنگ و نسل کے لوگ آباد ہیں، ایک زمانے میں یہاں پھولوں، پھلوں اور صنوبر کی خوشبو آتی تھی، کوئٹہ کی شاہراہوں پر ان پھولوں کی خوشبو ہوتی تھی، بچوں اور بزرگوں کے چہروں پر مسکراہٹیں اور گلیاں پیار محبت کے گیتوں سے گونجتے تھے لیکن اب یہاں بارود اور خون کی بو آتی ہے، یہ خون ہمارے بچوں کا خون ہے۔ان کا کہنا تھا کہ کوئٹہ میں بہنے والا خون کسی اور کا نہیں بلکہ ہمارے بزرگوں اور آنے والی نسلوں کا خون ہے، آج یہاں لاشوں پر چیخ و پکار کرتی ہوئی مائیں نظر آئیں گے، یہاں وہ مائیں اور والد نظر آئیں گے جو 10 برسوں سے اپنے لخت جگرکو ڈھونڈ رہے ہیں اور آہیں بھرتے ہوئے نظر آئیں گے۔انہوں نے کہا کہ یہاں وہ بہنیں بھی نظر آئیں گے جن کے سروں پر ان کے بھائی نے چادر رکھا تھا لیکن حکمرانوں نے اس کے سر سے وہ دوپٹہ تک چھین لیا، یہاں خانہ بدوشوں کے ڈھیروں کے علاوہ موت کے ڈھیرے نظر آئیں گے۔

 پی ٹی آئی حکومت کی نااہلی نے ملک کو نقصان پہنچایا ،آفتاب شیرپاؤ

قومی وطن پارٹی کے چیئرمین آفتاب احمد خان شیرپا ئو نے کہا ہے کہ پی ٹی آئی حکومت کی نااہلی نے ملک کو نقصان پہنچایا ہے۔کوئٹہ میںپی ڈی ایم کے جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ حکومت، اپوزیشن کے جلسوں سے خوفزدہ ہے اور گوجرانوالہ جلسے کے بعد انہوں نے مسلم لیگ(ن)کے رہنمائوں کے خلاف غداری کے مقدمات درج کروائے۔ ساتھ ہی انہوں نے الزام لگایا کہ یہ (حکومت)کراچی میں اتنی خوفزدہ ہوگئی کہ مرکز نے صوبے پر حملے کردیا اور دستخط کے لیے آئی جی پولیس کو اغوا کرلیا۔انہوں نے کہا کہ اس نااہل حکومت نے خود کو الگ تھلگ کرلیا ہے اور اس کی ہرپالیسی ناکام ہوگئی ہے اور مہنگائی کی وجہ سے ہر شخص کی زندگی مشکل ہوگئی ہے۔ادھر جے یو آئی(ف)کے سینیٹر مولانا عبدالغفور حیدری نے دعوی کیا کہ جلسے کے لیے آنے والے شرکا کو روکا گیا جبکہ کارکنان نے اسی جگہ پر دھرنا شروع کردیا جہاں انہیں روکا گیا۔

کوئٹہ میں موبائل سروس معطل

کوئٹہ میں اتوار کو سیکیورٹی خدشات کے باعث موبائل سروس کو معطل کردیا گیا۔صوبائی حکومت کے ترجمان لیاقت شاہوانی نے بتایا کہ سیکیورٹی خدشات کے پیش نظر موبائل سروس کو معطل کیا گیا، اس پر سیاست نہ کی جائے، اس سے قبل بھی محروم الحرام و دیگر غیر سیاسی اجتماعات کے دوران بھی متعدد بار موبائل سروس معطل کیا جاتا رہا ہے۔انہوں نے لکھا کہ موٹرسائیکل کی ڈبل سواری پرپابندی عائد کی گئی، ساتھ ہی انہوں نے پی ڈی ایم قیادت سے کہا کہ وہ اپنے کارکنوں کو تعاون کرنے کی تاکید کریں۔