نیب کا ملبہ بہت زیادہ ہے۔ جسٹس قاضی

انٹرنیٹ فوٹو

اسلام آباد : جسٹس مشیر عالم اور جسٹس قاضی امین پر مشتمل دو رکنی بنچ نے نیب کی طرف سے بنائے گئے کرپشن کیس کے ملزم علی اصغر علی کی درخواست ضمانت پر سماعت کی تو حقائق کا جائزہ لیتے ہوئے جسٹس قاضی امین احمد کا کہنا تھا کہ نیب کیا کرتا ہے؟

ملزم کے وکیل فاروق ایچ نائیک نے کہاکہ ان کے موکل دو سال سے میرا موکل جیل میں ہے۔2017میں نیب ریفرنس فائل ہوا۔

جسٹس قاضی امین کا کہنا تھا کہ کیس کے میرٹ پر بات نہیں کرینگے لیکن نیب کا ملبہ بہت زیادہ ہے۔ نیب اوپن اینڈ شٹ کیس کو چلا کر ختم کیوں نہیں کرتا ، فاضل جج نے استفسارکیا کہ ٹرائل کی تکمیل میں تاخیر کا ذمہ دار کو ن ہے؟

سپریم کورٹ نے احتساب عدالت سے ٹرائل کی پیش رفت رپورٹ طلب کرتے ہوئے کیس کی سماعت دو ہفتوں کیلئے ملتوی کردی۔