بھارت مقبوضہ کشمیر میں ظلم،دہشتگردی کو بندکرے، محمد غالب


برمنگھم: تحریک کشمیر یورپ کے صدر محمد غالب نے کہا کہ کنٹرول لائن پر بھارت اور پاکستان کے درمیان جنگ بندی تعلقات کو بہتر بنانے کا فیصلہ اس وقت تک  کامیاب نہیں ہو سکتا جب تک بھارت مقبوضہ کشمیر میں ظلم اور دہشتگردی کو بند نہ کرے ،امن اور مذاکرات کا راستہ اختیار کیا جائے۔

قائد کشمیر سید علی گیلانی نے بھی اس معاہدے پر تحفظات کا اظہار کیا ہے جبکہ بھارت کا ماضی کسی سے پوشیدہ نہیں کہ بھارت نے ہمیشہ دھوکہ دیا اپنے مقاصد کے لیے اس طرح کے معاہدے کیے پھر خود ہی خلاف ورزیوں کا ارتکا ب کرتا رہا اور خطے میں کشیدگی ختم کرنے میں کوئی مدد نہیں ملی ۔

انہوں نے کہا پاکستان اور بھارت کے درمیان اصل کشیدگی کا سبب مسئلہ کشمیر ہے  حکومت پاکستان نے اگر ماضی کی طرح کوئی چار نکاتی تقسیم کشمیر کے کسی ایجنڈے پر عملدرآمد کرنے کوئی کوشش کی تو کشمیری اسے قبول نہیں کریں گے ۔پرویز مشرف  نے بھی بڑی کوشش کی تھی مگر تحریک آزادی سے وابستہ قوتوں نے ناکام بنا دیا تھا اب پھر اس طرح کی افواہیں گردش کر رہی ہیں ادھر ہم ادادھر تم کے فارمولے پر عمل درآمد کیا جائے حکومت پاکستان ایسا کوئی قدم نہ اٹھائے جس سے لاکھوں کشمیریوں کی قربانیوں ضائع ہو جائیں ۔

محمد غالب نے کہا کہ کشمیری پاکستان کے دفاع اور بقا کی جنگ لڑ رہے ہیں نو لاکھ بھارتی فوج کو الھجا رکھا ہے پاکستان کی موجودہ کشمیر پالیسی کشمیر عوام کی خواہشات اور امنگوں کے مطابق نہیں ہے بھارت آبادی کے تناسب کو تبدیل کرنے کی سازشیں کر رہا ہے حکومت پاکستان کی خاموشی سے بھارت کی حوصلہ افزائی ہو رہی ہے اور کشمیریوں کی مشکلات میں اضافہ ہو رہا ہے۔ پاکستان کو اپنی وکالت کا حق ادا کرنا ہوگا ، ایسا کوئی فیصلہ نہ کیا جائے جس سے تحریک آزادی کو نقصان ہو اور کشمیریوں کی توجہ بھارت سے ہٹ کر پاکستان کی جانب مبذول ہو جائے اور کشمیریوں کے اندر پاکستان کے بارے میں غلط فہمیاں پیدا ہو جائیں۔