غیرمساویانہ معاہدوں کا ازسرِنو جائزہ لیا جائے:عمران خان


اسلام آباد:وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ترقی پذیر ممالک سے کھربوں روپے غیر قانونی طور پر بیرون ملک منتقل ہوئے، مالیاتی شفافیت کے حوالے سے تجاویز پیش کرنا چاہتے ہیں، شفافیت یقینی بنانے کے اقدامات ناگزیر ہیں۔ شفافیت کے برعکس اقدامات کے خلاف عالمی سطح پر جرمانے عائد کیے جائیں،

عالمی مالیاتی احتساب شفافیت اور 2030 کے ترقیاتی ایجنڈے کے حصول کی تکمیل سے متعلق تقریب سے ورچوئل خطاب میں وزیراعظم نے کہا کہ غیرمساویانہ معاہدوں کا ازسرِنو جائزہ لیا جائے۔  انہوں نے  کہاکہ پاکستان رپورٹ سفارشات کی توثیق کرتا ہے۔ رپورٹ سفارشات کے مطابق  اقدامات سے ترقی پذیر ملکوں پر مالیاتی  بوجھ کم ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ ترقی پذیر ملکوںسے کھربوں روپے غیر قانونی  طورپر بیرون ملک منتقل ہوئے ۔ مالیاتی شفافیت کے حوالے سے رپورٹ پیش کرنا چاہتے ہیں ۔ ۔ شفافیت  کے برعکس  اقدامات کے خلاف عالمی سطح پر جرمانے کائد کیے جائیں۔

انہوں نے کہاکہ ملک کے اندر اوربیرون ملک مالیاتی لین دین کو قانون کے دائرے میں لاناہوگا۔ رقوم کی غیر قانونی ترسیل پر قابو پانے کیلئے متعلقہ اداروں کو مضبوط بنانا ہوگا۔ ٹیکسز  اور غیرقانونی رقوم کی ترسیل  پر قابو پانے کیلئے ادارے سب کے نمائندہ ہوتے ہیں۔ اقوام متحدہ کو ٹیکس اصلاحات اور منی لانڈرنگ  سے متعلق نئے اقدامات اٹھاناہوں گے۔ وزیراعظم نے کہاکہ پاکستان 2030 کے ترقیاتی اہداف  کے حصول کیلئے بھرپور کردارادا کرے گا۔