اوپن بیلٹنگ کی ترمیم سینیٹ کے مسئلہ پر سپریم کورٹ پارٹی نہ بنے،مریم نواز


 لاہور: مسلم لیگ (ن)کی نائب صدر مریم نواز نے کہا ہے  کہ  ملک میں انصاف کے دو معیار اعلیٰ عدلیہ پر دھبہ ہیں، اوپن بیلٹنگ کی ترمیم سینیٹ کے  مسئلہ پرسپریم کورٹ پارٹی نہ بنے اور نہ ہی حکومت کی ڈوبتی کشتی کو سہارا دے، اگرسپریم کورٹ نے حکومت کو کوئی ریلیف دیا تو فیصلہ یکطرفہ ہوگا ۔

لاہور میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے مسلم لیگ(ن)کی نائب صدر مریم نواز  نے کہا کہ ڈسکہ میں ہونے والے ضمنی انتخابات میں پی ٹی آئی نے منظم دھاندلی کی، ہمارے ووٹرز کو ہراساں کیا گیا، پولنگ  سٹیشنزکو بند کرنے کے لیے فائرنگ کرائی گئی، حکومت کی دھاندلی میں چھ چھ گھنٹے پولنگ روکی گئی، پولنگ شام پانچ بجے ختم ہوجاتی ہے ۔ساری رات کیسے ووٹنگ ہوتی رہی؟ ہمیں20 پولنگ سٹیشنز میں دوبارہ الیکشن نہیں چاہئے، ہم نے الیکشن کمیشن سے درخواست کی پورے حلقے میں ری پولنگ چاہئے، دھند کی آڑ میں پریزائیڈنگ افسران کو اغوا کر لیا گیا اور الیکشن کمیشن میں بھی ناقابل تردید شواہد پیش کیے گئے ہیں۔ اب چیف الیکشن کمشنر ڈسکہ کے عوام کو انصاف دیں۔

انہوں نے کہا کہ کون کون دھاندلی میں ملوث ہیوہ سب جانتی ہیں، یہ سچ بتادیں ورنہ حقائق سامنے لانے پڑیں گے۔انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کے اراکین اور ایم این اے بھاگ رہے ہیں، بغاوت ہوچکی ہے، ضمنی الیکشن میں جو کچھ ہوا اسے پورا ایکسپوز کریں گے۔۔

انہوں نے کہا کہ براڈ شیٹ کو پہلے ہی روز فراڈ شیٹ کہا تھا، عمران خان کے کارندوں نے براڈ شیٹ سے اپنا کمیشن مانگا، براڈشیٹ سے پیسے لینے والے بے نقاب ہوگئے، کمپنی ان کو رسوااور بے نقاب کررہی ہے، نوازشریف سے پیسے نکلوانے کے چکر میں حکومت کو خود رقم دینی پڑگئی۔

انہوں نے کہا کہ ملک میں انصاف کے دو معیار اعلیٰ عدلیہ پر دھبہ ہیں، اوپن بیلٹنگ کی ترمیم سینیٹ کا مسئلہ سپریم کورٹ اس میں پارٹی نہ بنے اور نہ ہی حکومت کی ڈوبتی کشتی کو سہارا دے، اگرسپریم کورٹ نے حکومت کو کوئی ریلیف دیا تو فیصلہ یکطرفہ ہوگا، کو رٹ کوگندے کھیل میں گھسیٹنے پر حکومت کو بے نقاب کرتے رہیں گے۔

انہوں نے کہا کہ سینیٹ الیکشن سے متعلق میرا اصولی موقف ہے، سینیٹ الیکشن سے متعلق قانون میں ترمیم جعلی حکومت نہیں پارلیمنٹ کرسکتی ہے، عمران خان کی حکومت کو ہر موڑ پر رسوائی کا سامنا ہے۔

انہوں نے کہا کہ پرویزرشید کے کیس میں حکومت بے نقاب ہوگئی، بدنام زمانہ غنڈوں کے کاغذات منظور ہو جاتے ہیں، اور حق سچ بیان کرنے پر پرویزرشید کو سینیٹ الیکشن سے محروم رکھا جاتا ہے، عمران خان حکومت مستند اغواکار ہیں، دھند میں بندے اغوا کرنا ان کی حکومت کا شیوہ ہے، میرے خلاف نیب کے نوٹس بھی دھند میں گم ہوگئے، ایسے ہتھکنڈے حکومتی تابوت میں آخری کیل ٹھوکنے کے مترادف ہیں۔

حمزہ شہباز کی ضمانت پر انہوں نے اللہ کا شکر ادا کرتے ہوئے کہا کہ حمزہ شہباز نے ہمت اور بہادری کے ساتھ حالات کا مقابلہ کیا جبکہ ایک اور ایک گیارہ ہوتے ہیں اب ہم ساتھ ہوں گے، حمزہ کی کمی ہر فورم پر محسوس کی،  پارٹی کے لیے حمزہ نے قربانیاں دی، پارٹی کے ساتھ کھڑا رہا۔